Skip to content Skip to sidebar Skip to footer

اسلام کی نظر میں غیر مسلموں کے ساتھ اچھا برتاؤ

طالب / وقار احمد پاکستانی

الحمد للہ و کفی وسلام علی عباده الذین اصطفی

اس  بحث  کا  موضوع  اسلام  میں  غیر  مسلموں  کے  ساتھ  اچھا  برتاؤ ہے

غیر  مسلموں  کے  ساتھ  برتاؤ  کرنے کے  معاملے میں  مسلمانوں   کا  دستور  قران  کریم   ہے چناچہ  قران  مجید  نے  اس  سلسلے  میں  عام  قواعد  وضع  کیے  ہیں  ان  میں  سے   چند اہم  مندررجہ  ذیل  ہیں:

۱:دین  میں  کوئی  اکراہ  (جبر)  نہیں  ہے  لہذاقرآن  مجیدنے کسی  کو  زبردستیاسلام  قبول  کرنے  پر  مجبور  نہیں  کیابلکہ قرآن  مجید  نے  خوش  اسلوبی  اور    واضح  دلائل  کے  ساتھ  دعوت  دینے  کا  حکم  دیا ہے ،  اللہ تعالی کا  ارشاد  ہے 

 "  ادع إلى سبيل ربك بالحسنة و الموعظة الحسنة" 

  آپ  اپنے  رب  کی  راہ  کی  طرف  علم  کی باتوں  اور  اچھی  نصیحتوں  کے  ذریعہ  سے  بلائیے

" و لاتجادلوا أهل الكتاب إلا بالتي هي أحسن" 

اور  تم    اہل  کتاب  کے  ساتھ  بجز  مہذب  طریقہ  کے  مباحثہ  مت  کرو

۲:غیر  مسلموں  کے  ساتھ تعلقات  میں اصل  صلح  ہے  نہ  کہ  جنگ  اور  لڑائی:اس  باب  میں  آپ ﷺ  کی  بہت  احادیث  ہیں  جیساکہ  ارشاد  ہے  کہ  جس  نے  کسی  ذمی  کو  تکلیف  دی  تو    میں  اس کا خصم  (اس کے حق کامطالبہ  کرنے  والا  )  ہوں  اور  میں  جس  کا  خصم (اس کے حق کا  مطالبہ  کرنے  والا  )  ہوجاؤں  تومیں قیامت  کے دن اس  کے  حق  کا  مطالبہ  کرونگااور  دوسری  حدیث  کا  مفہوم  ہے  کہ  جس  کسی  نے  ذمی  کو  قتل  کیا  وہ  جنت  کی  بو  بھی  نہیں  سونگھ  سکے  گا

۳:اسلام  میں  دوسروں  کے  ساتھ  تعلقات  عدل  پر  قائم  ہوتے  ہیں  جیسا  کہ  اللہ  کا  فرمان  ہے  “و لايجرمنكم شنآن قوم على أن لا تعدلوا”  اور  کسی  خاص  قوم کی  عداوت  تمھارے  لیے  اس  کا  باعث  نہ  ہوجاوے  کہ  تم  عدل  نہ  کرو

آپ  علیہ  السلام  کا  غیرمسلموں  کے  جنازہ  کا  اکرام  کرنا: ایک  حدیث  کا  مفہوم  ہے  کہ  آپ  علیہ  السلام کے  سامنے  سے  ایک  یہودی  کا  جنازہ  گزرا  تو  آپ  علیہ  السلام  اس  کے (احترام) لیےکھڑے  ہوئے  ،  آپ  علیہ  السلام  سے  کہا  گیا    کہ  یہ  تو  یہودی  کا  جنازہ  ہےآپ  نے  فرمایا  کہہ کیا  یہ  انسان نہیں  ہے؟

Spread the love
Show CommentsClose Comments

Leave a comment