Skip to content Skip to sidebar Skip to footer

نوجوانوں کی عقلی تربیت اور معاشرے کی اصلاح میں ٹی وی چینلز کا کردار

تحریر: ڈاکٹر محمد نادی ازھری

ٹی وی چینلوں کا شمار ان ذرائع ابلاغ میں ہوتا ھے جو ناظرین کے لیے سب سے زیادۃ پر تاثیر ہیں.اس لیے کہ یہ ذرائع دنیا کی ہر جگہ میں موجود ہیں، کوئی گھر ایسا نہیں جس میں ٹی وی نہ ھو۔اور یوں یہ ذریعہ الفاظ یا تصویر کے سہارے سے سب سے زیادہ پر کشش اور فکر و عمل پر سب سے زیادہ اثر انداز ثابت ہوا ہے۔ تاھم تعلیم وتربیت کے میدان میں ھم ان چینلوں کے موثر کردار اور اس کے ساتھ ساتھ مثال کے طور پر معاشرتی ، معاشی اور سیاسی ضروریات کے حوالے سے ھماری زندگی میں ان کی جو خدمات ھیں انکا انکار نھیں کرتے.

ان موجودہ ٹی وی چینلوں کو دو حصوں میں تقسیم کیا جاسکتا ھے:    

  • وہ اسلامی ٹی وی چینل جو معتدل افکار کو بطور ھدف اختیار کرتے ھیں، اس قسم کے یہ چینل مسلمان نوجوانوں کے لیے اخلاقی، اجتماعی، تربیتی اور عملی اقدار کے علاوہ اسلام کو صحیح معنوں میں پیش کرنے کی حامل تعلیمات و ھدایات پھیلانے کی بدولت اپنے ناظرین پر براہ راست اثر اندازی کے حامل مانے جاتے ھیں۔
  • دوسری قسم ان عربی اور غیر عربی چینلوں کی ہے جو اپنے من جملہ سرگرمیوں میں ایسے مشکوک اور دور رس مقاصد رکھتے ھیں جو اسلام اور مسلمانوں کے لیے خطرناک ہو سکتے ھیں۔ کیونکہ یہ چینل مسلمان نوجوانوں کو غیر اخلاقی مغربی عادات اور روایات کو اپنانے اور اسلامی تشخص سے ہاتھ دھونے پر قائل کرنے کی کوششوں میں مگن ھیں۔ اور یہ ہوگا جب اللہ تعالی کے اوامر و نواھی سے منہ موڑ دیا جائے گا۔

ان مشکوک چینلوں کامعاشرے کے لوگوں کے ذھنوں اور ان کے افکار پر براہ راست اثر ھوتا ھے۔ اسی وجہ سے یہ کہنا بے جا نہ ہوگا کہ برے اثر کے لحاظ سے یہ چینل نوجوانوں کا برے لوگوں کی صحبت اختیار کرنے سے کم نہیں ہے جس سے اسلام نے ہمیں منع کیا ہے۔

اس لیے ہم اپنے سمجھدار نوجوانوں کو یہ نصیحت کریں گے کہ صرف اسلامی چینلوں کو دیکھیں یا ان کے علاوہ وہ چینل جو اپنے پروگراموں کو کردار سازی کی طرف ترغیب اور ترغیب اور دین میں غلو اور انحراف سے روکنے کی غرض سے ترتئب دیتے ہیں۔ اور  ایسے چینلوں کو جو دیکھیں  جو معاشرتی باہمی تعلقات کو مضبوط کرنے اور معاشرے کے افراد کے درمیان باہمی محبت اور بھائی چارے کو فروغ دیتے ہیں تاکہ ترقی اور سکون حاصل ہوں جو کہ معاشرے کے افراد کے درمیان ہم آہنگ زندگی کے لیے ضروری ہیں۔ علاوہ ازیں اس قسم کے چینل جو کہ اسلامی تعلیمات سے دور نہیں جاتے عالم اسلامی کے جدید مسائل اور مشکلات کا صحیح معنوں میں مقابلہ کرنے کے لیے بنیادی کردار ادا کرنے کے ضامن ہوا کرتے ہیں۔ اور اسی طرح یہی چینل دراصل وہ عصری ذرائع میں سے اصل ذریعہ ہے جس سے صحیح معنوں میں دعوت الی اللہ کا کام لیا جا سکتا ہے۔

Spread the love
Show CommentsClose Comments

Leave a comment