Skip to content Skip to sidebar Skip to footer

شیخ محمد محي الدین عبد الحمید رحمہ اللہ

بسم اللہ الرحمن الرحیم

شیخ محمد محي الدین عبد الحمید رحمہ اللہ علماۓ ازھر میں سے ہیں۔

اعداد: ڈاکٹر محمد عبد العزیز خضر

علامہ محی الدین رحمہ اللہ مصر محافظة الشرعیة میں 1318ھ_ 1900م میں پیدا ہوۓ۔

آپ نے جوانی کی عمر میں قرآن حفظ کیا پھر أزھر میں داخلہ لیا اور وہیں رہے یہاں تک کہ 1344_ 1925م میں عالمیہ کیا۔

شیخ کی صلاحیتیں واضح ہوئیں اور ابھی تک وہ طالب علم تھے تو آپ نے مقامات بدیع الزمان الھمذانی کی مستفیض شرح کی جو علمی فوائد، ادبی چٹکلے اور تاریخی نوادر سے بھرپور تھی یہ کام پھیل گیا جبکہ وہ ابھی تک طالب اور درجہ عالمیة میں تھے۔

فراغت کے بعد آپ نے معھدالقاھرة الدینی میں استاد کے طور پہ کام کیا اورجب أزھر یونیورسٹی میں کلیات کا آغاز ہوا تو 1350ھ_1931م میں آپ کلیة اللغة العربیة میں تدریس کے لیۓ منتخب ہوۓ اور آپ تدریسی کلیة کے اعضاء میں  سب سے کم عمر تھے۔

کلیة میں آپ کو چار سال ہوۓ تھے کہ آپ طلبہ کو اعلی دروس پڑھانے کےلئے منتخب ہوۓ اور اپنے اساتذہ اور شیوخ کے دوست بن گئے

وہ آپ کے علم و فضل سے معترف ہوۓ اورآپ کی شہرت کلیة کے باہر بھی ہونے لگی تو أزھرکے شیخ نے آپ کو ثقافتی اور لغوی کانفرسوں اور دینی مناسبات میں أزھر کے نام سے منتخب کیا۔

آپ سوڈان میں تدریس کے لئے منتخب ہوۓ اور وہاں چار سال تک شریعت اسلامیة میں بطور استاد کام کیا، شیخ صاحب کی بہت مؤلفات ہیں جو آپ مے تالیف اور تحقیق کیں۔

شذوذ الذھب لامام جمال الدین ابن ھشام کی شذور الذھب ک شرح اور اس پہ تعلیق، شرح ابن عقیل علی ألفیة بن مالک کی نحو و صرف پہ شرح، سبیل الإیضاح فی شرح متن نور الإیضاح فی الفقہ الحنفی، کمال الدین ابن الھمام حنفی کی مسایرة فی شرح المسامرہ فی علم العقائد المنجیة فی الأخرة، ابن ھشام کی نحو میں مغنی اللبیب کتاب کی تحقیق وغیرہ۔

علم، کتابت اور تالیف و تدریس سے بھرپور زندگی کے بعد آپ 1392ھ 1972م کو اللہ عزوجل کی جوار میں منتقل ہو گئے۔

اللہ عزوجل علامہ شیخ محمد محی الدین عبد الحمید پہ رحم کرے، آپ کے بارے بھی وہ کہا گیا جو امام طبری رحمہ اللہ کے بارے کہا گیا:

ایسے قاری کی طرح جو قرآن کے علاوہ کچھ نہیں جانتا، ایسا محدث جو صرف حدیث ہی جانتاہو، ایسے فقیہ کی طرح جو صرف فقہ ہی جانتا ہو، اور ایسے نحوی کی طرح جس کے پاس صرف نحو کا علم ہی ہو۔

یہ آپ کا سب علوم میں تعمق اور ماہر ہونے کی وجہ سے کہا گیا۔

Spread the love
Show CommentsClose Comments

Leave a comment